’’احکام شریعت میں حالات و زمانہ کی رعایت‘‘

   
حوالہ: 
تاریخ : 
۱۰ دسمبر ۲۰۱۶ء

نحمدہ تبارک وتعالیٰ ونصلی ونسلم علیٰ رسولہ الکریم وعلیٰ آلہ واصحابہ واتباعہ اجمعین۔ اما بعد۔

اسلام ادیانِ سماویہ میں آخری دین ہے جس نے قیامت تک نسلِ انسانی کی راہنمائی کرنی ہے اور اس کے احکام و قوانین رہتی دنیا تک انسانی معاشرہ کے لیے فطری قوانین و نظام کی حیثیت رکھتے ہیں۔ جناب نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے بعد وحی و نبوت کا دروازہ بند ہوگیا تھا جس کی وجہ سے اس دوران نئی آسمانی تعلیمات کا کوئی امکان نہیں رہا۔ اس کے ساتھ ساتھ انسانی معاشرہ میں فکری و ذہنی ارتقاء، تہذیبی تغیرات اور نت نئے انکشافات و تجربات کے باعث معاشرت و اجتماعیت کا کسی ایک مقام و کیفیت پر ٹھہراؤ بھی ممکن نہیں ہے۔ اور ہر تغیر و ارتقاء کے ساتھ قوانین و ضوابط کی تبدیلی اور نئے ضوابط و احکام کی ضرورت مسلسل قائم ہے جو قیامت تک اسی طرح موجود رہے گی۔ جبکہ حالات کے تغیر کے ساتھ ساتھ پہلے سے موجود احکام کی تطبیق اور نئے قوانین کی تشکیل معاشرتی ارتقاء کے فطری اور لازمی تقاضے کی حیثیت رکھتی ہے۔

اسلام میں احکام و قوانین کی بنیاد قرآن و سنت پر ہے جو انسانی معاشرت کے لیے اساس کی حیثیت رکھتے ہیں۔ ان کے دائرے سے ہٹ کر کسی صالح معاشرے کی تشکیل اسلامی نقطۂ نظر سے ممکن ہی نہیں ہے، اور قرآن و سنت کے صریح نصوص و احکام میں کسی تبدیلی کی بھی کوئی گنجائش نہیں ہے۔ چنانچہ وحی و نبوت کے انقطاع کے بعد سے قیامت تک کے دور میں ضرورت کے مطابق احکام و قوانین کی تعبیر و تشریح، تطبیق اور نئے قوانین و ضوابط کی ترتیب و تدوین کے لیے اسلام نے ’’اجتہاد‘‘ کا اصول پیش کیا ہے جس کے ذریعہ انسانی علم و عقل کو یہ اختیار دیا گیا ہے کہ وہ قرآن و سنت کے اصول و نصوص کے دائرے میں ان سے راہنمائی لیتے ہوئے یہ فریضہ سر انجام دے۔ چنانچہ انسانی علم و عقل نے جناب نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے وصال کے بعد تسلسل کے ساتھ ہر دور میں یہ خدمت سر انجام دی ہے اور یہ سلسلہ اسی طرح قیامت تک جاری رہے گا۔

اسلامی شریعت کا یہ امتیاز و اختصاص ہے کہ اس میں جمود و تعطل نہیں ہے بلکہ وہ علمی و فکری حرکت کی ہمیشہ نمائندہ رہی ہے۔ اور مسلم مجتہدین و فقہاء کی اس حوالہ سے بے پناہ خدمات و مساعی نہ صرف اسلامی تاریخ بلکہ نسل انسانی کی علمی و فکری تاریخ میں بھی بجا طور پر قابل فخر سمجھی جاتی ہیں۔ سماج اور قانون کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ ان میں ’’ڈیڈ لاک‘‘ نہیں ہوتا، سماج کو کسی جگہ ٹھہراؤ نہیں ہوتا اور قانون سماج کی اس حرکت پذیری کے کسی مرحلہ میں اس کی راہنمائی سے معذرت نہیں کرتا بلکہ ہر مسئلہ کا حل بتاتا ہے اور ہر ضرورت کی تکمیل کے لیے ہمیشہ مستعد رہتا ہے۔ اس سماجی اصول کا صحیح ترین مصداق اسلامی شریعت اور اس کا اصول اجتہاد ہے جو قرآن و سنت کے بنیادی اصولوں اور نصوص صریحہ کا دائرہ پوری طرح قائم رکھتا ہے لیکن اس کے ساتھ پیش آمدہ مسائل اور ضروریات میں بھی آنکھیں بند کر لینے کی بجائے استدلال و استنباط اور تعبیر و تشریح کے تنوع اور ندرت کے ذریعہ انسانی معاشرت کے سفر کے جاری رہنے میں مددگار ہوتا ہے۔

اسلامی شریعت پر جمود کا بے جا الزام اسلام کے اصول اجتہاد اور اس کی مسلسل کارفرمائی سے بے خبری کی علامت ہے جو تاریخی تسلسل کے ساتھ ساتھ زمینی حقائق کے بھی منافی ہے۔ برصغیر کے نامور مفکر و دانشور حضرت مولانا محمد تقی امینیؒ نے اسلام کے اسی دائرۂ اجتہاد کے تعارف کے لیے ایک معرکۃ الآراء کتاب ’’احکام شریعت میں حالات و زمانہ کی رعایت‘‘ کے عنوان سے تصنیف فرمائی تھی جس میں ایک طرف انہوں نے شریعتِ اسلامیہ پر علمی و فکری جمود کی بے جا تہمت دھرنے والوں کی بے خبری کی خبر لی ہے، دوسری طرف اسلامی شریعت کے احکام و قوانین کو جمود کے دائروں میں جکڑ دینے کی بے جا کوششوں کو بھی اسلام کے مزاج اور دینی تقاضوں کے منافی قرار دیا ہے، اور اس کے ساتھ ساتھ مجتہدین و فقہاء کی علمی کاوشوں کو ایک حسین گلدستہ کی صورت میں پیش کیا ہے۔

اس عظیم القدر علمی کاوش سے ہزاروں علماء اور دانشوروں نے استفادہ کیا ہے اور راہنمائی حاصل کی ہے۔ جبکہ مذکورہ بالا دونوں حوالوں سے یہ کتاب آج کی علمی دنیا میں ایک کلاسیکل اور اساسی حوالہ کی حیثیت رکھتی ہے۔ ضرورت محسوس کی جا رہی تھی کہ اس کتاب کی ازسرِنو اشاعت کی کوئی صورت نکالی جائے اور اس کے حوالوں کی تخریج کے ساتھ ساتھ ضروری مقامات پر توضیح و تشریح کو بھی اس کا حصہ بنایا جائے۔ مجھے یہ معلوم کر کے خوشی ہوئی ہے کہ ہمارے فاضل دوست نے اس ضرورت کو محسوس کرتے ہوئے یہ خدمت سرانجام دی ہے اور ہمارے قدیم ترین دینی ادارے جامعہ فتحیہ اچھرہ لاہور نے اس کی طباعت و اشاعت کا اہتمام کیا ہے۔ یہ کتاب علمی، فقہی اور فکری ماحول میں کام کرنے والے اصحابِ فکر و دانش کے لیے بلاشبہ ایک گراں قدر تحفہ ہے اور اس کی دوبارہ اشاعت پر جامعہ فتحیہ لاہور ہم سب کے شکریہ کا مستحق ہے۔

اللہ تعالیٰ اسے زیادہ سے زیادہ لوگوں کے لیے راہنمائی کا ذریعہ بنائیں اور مصنف علیہ الرحمۃ کے درجات جنت میں بلند سے بلند تر فرمائیں، آمین یا رب العالمین۔

   
2016ء سے
Flag Counter